طالبان سے مزاکرات

forums discuss Pakistani politics طالبان سے مزاکرات

  • This topic has 241 replies, 10 voices, and was last updated 6 years ago by Bawa.
  • Creator
    Topic
  • #99794 0 Likes | Like it now
    Participant
    Participant
    مومن
    • Topics:934
    • Replies:5621
    • Contributions:6555
    • Expert
    • ★★★

Viewing 30 replies - 61 through 90 (of 241 total)
  • Author
    Replies
  • #107843 0 Likes | Like it now
    Bawa
    • Offline
      • Topics:441
      • Replies:5095
      • Contributions:5536
      • Expert
      • ★★★

    #107844 0 Likes | Like it now
    Dusky
    • Offline
      • Topics:1
      • Replies:104
      • Contributions:105
      • Professional
      • ★★

    ظالمان کے اس بیان سے تو وہ محاورہ یاد آگیا ، گاف لگی پھٹنے، خیرات لگی بٹنے

    #107845 0 Likes | Like it now
    Participant
    Participant
    مومن
    • Offline
      • Topics:934
      • Replies:5621
      • Contributions:6555
      • Expert
      • ★★★

    #107846 0 Likes | Like it now
    Dusky
    • Offline
      • Topics:1
      • Replies:104
      • Contributions:105
      • Professional
      • ★★

    کیا چورن بیان ہے ان جسٹس صاحب کا. کوئی ان سے پوچھے بلوچی کیوں نہیں خود کش بمبار بن گۓ اس وجہ سے؟

    #107847 0 Likes | Like it now
    Bawa
    • Offline
      • Topics:441
      • Replies:5095
      • Contributions:5536
      • Expert
      • ★★★

    ابھی تو چالیس طالبان جہنم رسید کیے ہیں تو یہ حال ہو گیا ہے کہ جو طالبان کل تک مذاکرات کا نام سننا گوارہ نہیں کرتے تھے اب مذاکرات کے لیے پاؤں پکڑنے تک آ گئے ہیں

    :) :)

    بہرحال مذاکرات کو اب بھی موقع دیا جانا چاہئیے تاکہ خون خرابے کے بغیر ہی مسئلہ حل ہو جائے

    .

    .

    #107848 0 Likes | Like it now
    Dusky
    • Offline
      • Topics:1
      • Replies:104
      • Contributions:105
      • Professional
      • ★★

    ویسے یہ فضللہ جو ان کا امیر بنا ہے اس کو اچھی ترہا پتا ہے جب آرمی مارتی ہے تو کیا حال ہوتا ہے، یہ سوات میں بھی چپلیں چھوڑ کر بھگا تھا، یہاں بھی یہی حال ہوگا، بہتر حل یہی ہے کہ ان کو چپل چھوڑ کر بھاگنے پر مجبور کیا جاے

    #107849 0 Likes | Like it now
    Saleemraza
    • Offline
      • Topics:15
      • Replies:1102
      • Contributions:1117
      • Expert
      • ★★★

    ڈسکی بھائی

    آپ نے درست فرمایا ہے آرمی کو ان درندوں کو کچُل دینا چاہیے ۔۔۔ تب جا کر

    ان بے غیرتوں سے جان چھوٹے گی ۔۔

    ۔۔ لیکن مھجے ڈر ہے نواز شریف کہیں بزدلی نہ دکھا جاے۔۔۔۔

    #107850 0 Likes | Like it now
    Dusky
    • Offline
      • Topics:1
      • Replies:104
      • Contributions:105
      • Professional
      • ★★

    رضا بھائی علاج تو انکا یہی ہے، لاتوں کے بھوت باتوں سے کہاں مانے گے. لیکن اس معملے میں نوازشریف سے زیادہ فوج کی مرضی چلے گی. دعا یہ ہے راحیل شریف کہیں کیانی کی ترہا خصی نہ نکلے.

    #107851 0 Likes | Like it now
    Bawa
    • Offline
      • Topics:441
      • Replies:5095
      • Contributions:5536
      • Expert
      • ★★★

    #107852 0 Likes | Like it now
    Bawa
    • Offline
      • Topics:441
      • Replies:5095
      • Contributions:5536
      • Expert
      • ★★★

    #107853 0 Likes | Like it now
    Participant
    Participant
    مومن
    • Offline
      • Topics:934
      • Replies:5621
      • Contributions:6555
      • Expert
      • ★★★

    #107854 0 Likes | Like it now
    Participant
    Participant
    مومن
    • Offline
      • Topics:934
      • Replies:5621
      • Contributions:6555
      • Expert
      • ★★★

    #107855 0 Likes | Like it now
    Participant
    Participant
    مومن
    • Offline
      • Topics:934
      • Replies:5621
      • Contributions:6555
      • Expert
      • ★★★

    #107856 0 Likes | Like it now
    Participant
    Participant
    مومن
    • Offline
      • Topics:934
      • Replies:5621
      • Contributions:6555
      • Expert
      • ★★★

    لاہور… امیر کالعدم تحریک طالبان پنجاب عصمت اللہ معاویہ نے کہا ہے کہ پیپلز پارٹی اور اے این پی مسلم لیگ ن کو جنگ میں دھکیلنا چا ہتی ہیں۔ لیکن مسلم لیگ ن کو یاد رکھنا چاہیے کہ جنگ کے بیج بونا آسان مگر فصل کاٹنا مشکل ہوتی ہے۔ کالعدم تحریک طالبان پنجاب کے امیر عصمت اللہ معاویہ نے جیو نیوز کو بتایا ہے کہ نیٹو اور امریکا شمالی وزیرستان میں آخری معرکہ لڑنا چاہتے ہیں۔پاکستان میں سعودی وزیرخارجہ کی آمد وزیرستان میں آپریشن کے سلسلہ کی ایک کڑی تھی۔ انہوں نے کہا کہ ہم نے ہمیشہ مذاکرات کا خیر مقدم کیا ہے۔پیپلز پارٹی اور اے این پی مسلم لیگ ن کو جنگ میں دھکیلنا چاہتی ہیں۔ لیکن مسلم لیگ ن یاد ر کھے کہ لڑائیوں کے بیج بونا آسان مگر فصل کاٹنا مشکل ہوتی ہے۔امریکا پاکستان میں انارکی پھیلانا چاہتاہے۔شمالی وزیرستان کے عوام کو ہجرت پر مجبور کیا گیا تو تجزیہ نگاروں اور دانشوروں کو بھی گھر چھوڑنا پڑیں گے۔ ٹی ٹی پی کی مرکزی شوریٰ مذاکرات کا فیصلہ کر چکی ہے۔حکومت کو اس کا مثبت جواب دینا چاہیے۔ انہوں نے کہا کہ مولانا فضل الرحمٰن،منور حسن ،عمران خان اور سمیع الحق مذاکرات میں اہم کردار ادا کر سکتے ہیں۔

    #107857 0 Likes | Like it now
    Participant
    Participant
    مومن
    • Offline
      • Topics:934
      • Replies:5621
      • Contributions:6555
      • Expert
      • ★★★
    #107858 0 Likes | Like it now
    Participant
    Participant
    مومن
    • Offline
      • Topics:934
      • Replies:5621
      • Contributions:6555
      • Expert
      • ★★★

    #107860 0 Likes | Like it now
    pkpolitician
    • Offline
      • Topics:7
      • Replies:98
      • Contributions:105
      • Professional
      • ★★

    ویل ڈن میاں صاحب

    چرچل جیت گیا‘ ہٹلر کا جرمنی اور ہیروہیٹو کا جاپان ہار گیا‘ یہ تاریخ ساز فتح تھی اور تاریخ جب بھی لکھی جاتی‘ مورخ چرچل کو سلام کیے بغیر آگے نہیں بڑھ سکتا تھا‘ دنیا میں آفرینش سے لے کر 1945ء تک ہزاروں لاکھوں جنگیں لڑی گئیں‘ ہزاروں لاکھوں سالاروں نے یہ جنگیں جیتیں‘ کھوپڑیوں کے مینار بھی بنے اور ان میناروں پر جھنڈے بھی لہرائے گئے اور ان کی کامرانیوں پر کتابیں بھی لکھی گئیں لیکن دنیا کی آخری بڑی جنگ کا سہرہ بہرحال ونسٹن چرچل ہی کو نصیب ہوا‘چرچل فاتح عالم بن گیا‘ جرمنی اور جاپان دونوں خاک نشین ہو گئے‘ سوویت یونین مشرقی جرمنی اور ہنگری تک محدود ہوگیا‘ امریکا نے بڑے بھائی کا کردار ادا کیا‘ یہ برطانیہ کی مدد کے لیے آیا‘ جنگ ختم ہوئی‘ اس نے برطانیہ کے سر پر ہاتھ پھیرا اور واپس بحراوقیانوس کے ٹھنڈے پانیوں کے پار چلا گیا‘ چرچل اس جنگ کا فاتح تھا۔

    دنیا کی دوسری عالمی جنگ جیتنے کے بعد چرچل کو خوش ہونا چاہیے تھا مگر وہ اداس تھا‘ اس کی شامیں سگار پیتے گزرتی تھیں‘وہ زیادہ میل ملاپ بھی نہیں کرتا تھا‘ چرچل کے ساتھی‘ اس کے اہل خانہ اور اس کے قریبی دوست اس تبدیلی پر حیران تھے‘ آپ خود تصور کیجیے جو شخص لاشوں پر کھڑے ہو کر بھی ہشاش بشاش رہتا ہو‘ دنیا جس کی حس مزاح کی معترف ہو اور جو بڑے سے بڑے بحران میں بھی خوش رہنا جانتا ہو وہ دنیا کی سب سے بڑی فتح کے بعد اداس اور خاموش ہو جائے تو کیا یہ اچنبھے کی بات نہیں؟ لوگ پریشان تھے‘ پریشانی کے اس عالم میں چرچل کے ایک دوست نے ایک شام اس اداسی کی وجہ پوچھ لی‘ چرچل نے سگار کا لمبا کش لیا‘ ناک سے آہستہ آہستہ دھواں چھوڑا اور پھر آہستہ آواز میں بولا ’’ ہم جنگ جیت گئے لیکن پانچ کروڑ لوگ زندگی کی بازی ہار گئے‘ پورے یورپ‘ پورے مشرق بعید اور آدھے سوویت یونین میں سیکڑوں نئے قبرستان بن چکے ہیں‘ کروڑوں لوگ کیمپوں میں پڑے ہیں‘ کروڑوں اسپتالوں میں سسک رہے ہیں اور کروڑوں لوگ باقی زندگی معذور بن کر گزاریں گے‘ میں جب بھی فتح کا جشن منانے لگتا ہوں‘ یہ لوگ میرے سامنے آ جاتے ہیں‘ یہ لوگ مجھے خوش نہیں ہونے دیتے‘‘ دنیا کے سب سے بڑے فاتح ونسٹن چرچل نے کہا ’’کاش میں اس جنگ کو روک سکتا‘ کاش ہم دنیا کے تنازعے میز پر حل کر لیتے‘ کاش ہم مذاکرات کرتے اور یہ مذاکرات جنگ روک لیتے‘ کاش ہم کروڑوں لوگوں کی زندگی بچا لیتے‘‘۔

    یہ فتح کا ایک نیا ورژن تھا‘ یہ ورژن ہی دنیا کا اصل ورژن ہے‘ امن زندگی اور جنگ موت ہوتی ہے‘ انسان کا اصل کمال لڑنا نہیں امن قائم رکھنا ہوتا ہے‘ لڑائی صرف ڈیفنس تک محدود ہونی چاہیے‘ جانوروں اور انسانوں میں یہی فرق ہوتا ہے‘ جانور لڑتا ہے جب کہ انسان اپنے تمام مسائل گفتگو کے ذریعے حل کرتے ہیں‘ لڑائی یا جنگ کو اسی لیے درندگی قرار دیا جاتا ہے کیونکہ انسان لڑائی کے دوران شرف انسانیت سے اتر کر جانور کی سطح پر آ جاتا ہے اور یہ انسانیت کی توہین ہے‘ اسلام کو دین فطرت اس لیے بھی کہا جاتا ہے کہ یہ امن کو جنگ پر فوقیت دیتا ہے‘ اس میں خون کا بدلہ صرف خون نہیں ‘ یہ دیت کو قصاص پر اہمیت دیتا ہے‘یہ حضرت امیر حمزہؓ کے قاتل تک کو معاف کر دیتا ہے‘ یہ قاتلوں کو تین آپشن دیتا ہے‘ معافی‘ دیت اور آخر میں قصاص‘ دنیا کے کسی دوسرے مذہب میں یہ گنجائش موجود نہیں‘ آپ نے کبھی سوچا‘کیوں؟ اس لیے کہ دین فطرت خون کے دھبے خون سے دھونے کو بے وقوفی سمجھتا ہے اور یہ بے وقوفی معاشروں کو قبرستانوں اور جنگلوں میں تبدیل کر دیتی ہے۔

    امن ہر حال میں سپریم ہونا چاہیے اور اس کے لیے مذاکرات کے خواہ کتنے ہی دریا کیوں نہ پار کرنا پڑیں انسان کو کرنا چاہئیں‘ جنگیں اگر مسائل حل کر سکتیں تو دنیا میں عالمی جنگوں کے بعد کوئی مسئلہ نہ ہوتا‘ دنیا کی دو بڑی جنگوں کے بعد بھی مسائل موجود ہیں اور انسان یہ مسئلے مذاکرات ہی کے ذریعے حل کر رہے ہیں‘ جنگی فتوحات اگر کسی انسان کو خوشی دے سکتیں تو دنیا میں چرچل کو سب سے زیادہ خوش ہونا چاہیے تھا لیکن دنیا کا سب سے بڑا فاتح دنیا کی سب سے بڑی فتح کے بعد بہت اداس تھا‘ چرچل تو کیا دنیا کا کوئی مہذب انسان‘ خون بہانے کے بعد خوش نہیں رہ سکتا‘ یہ وہ حقیقت ہے جسے ہمیں ہرحال میں تسلیم کرنا پڑے گا۔

    پاکستان کا سب سے بڑا مسئلہ امن و امان کی خرابی ہے‘ اس مسئلے کی بنیاد تنظیمیں ہیں‘ حکومت نے ستمبر 2013ء میں طالبان گروپوں کے ساتھ مذاکرات شروع کیے‘ یہ مذاکرات یکم نومبر تک ایک خاص سطح پر پہنچ گئے لیکن تحریک طالبان پاکستان کے امیر حکیم اللہ محسود پر ڈرون حملہ ہوا اور یہ اس حملے میں مارے گئے اور یوں مذاکراتی عمل معطل ہوگیا‘ طالبان نے ملا فضل اللہ کو نیا امیر چن لیا‘ یہ مذاکرات کے خلاف ہیں‘ یہ لڑائی کو اہمیت دیتے ہیں‘ طالبان نے پاکستان کے اندر حملوں میں اضافہ کر دیا‘ حملوں کی نئی لہر ریاست کے لیے قابل قبول نہیں تھی چنانچہ فوج‘ سیاسی جماعتیں اور میڈیا طالبان کے خلاف ملٹری آپریشن کا مطالبہ کرنے لگا‘ حکومت دباؤ میں آ گئی اور یوں محسوس ہونے لگا میاں نواز شریف کسی بھی وقت فوجی آپریشن کا اعلان کر دیں گے‘ بدھ 29 جنوری کی صبح بھی زیادہ تر لوگوں کا خیال تھا میاں نواز شریف قومی اسمبلی میں آئیں گے اور طالبان کے خلاف جہاد کا اعلان کر دیں گے لیکن وزیراعظم نے امن کو ایک اور موقع دینے اور چار رکنی مذاکراتی کمیٹی بنانے کا اعلان کر کے پورے ملک کو حیران کر دیا‘ وزیراعظم کی طرف سے اس اعلان سے قبل یوں محسوس ہوتا تھا ریاست نے لڑنے کا فیصلہ کر لیا ہے‘ پاکستان مسلم لیگ ن کی پارلیمانی پارٹی نے بھی 27 جنوری کو وزیراعظم کو ’’میاں صاحب پے جاؤ‘‘ کا مینڈیٹ دے دیا تھا‘ وزیر قانون رانا ثناء اللہ نے تو گارڈین کو انٹرویو دیتے ہوئے یہ تک بتا دیا ’’ حکومت نے 174 مقامات سرکل کر لیے ہیں‘ ریاست ان مقامات پر آپریشن کرے گی‘‘ گزشتہ جمعے کو صدر ممنون حسین نے بھی لنچ کے دوران فرمایا تھا’’ مذاکرات کا اتمام حجت ہو چکا ہے‘ ریاست کو اب آپریشن کرنا چاہیے‘‘ لیکن میاں صاحب عین موقع پر پہنچ کر ایک سو اسی درجے پر مڑے اور امن کو ایک اور موقع دے کر ان تمام قوتوں کو حیران کر دیا جو فوجی آپریشن کی توقع کر رہی تھیں اور جو اس آپریشن کے دوران میاں نواز شریف کو ایک بار پھر ایوان اقتدار سے فارغ ہوتے دیکھنا چاہتی تھیں۔

    میاں نواز شریف نے بہرحال ایک اچھا فیصلہ کیا‘ کمیٹی کے ارکان بھی غیر متنازعہ اور سمجھ دار ہیں‘ عرفان صدیقی 1996ء سے شریف فیملی کے قریب ہیں‘ یہ صدر رفیق احمد تارڑ کے پریس سیکریٹری بھی رہے‘ یہ میاں نواز شریف کی حکومت کے خاتمے کے بعد بھی ان کے رابطے میں تھے‘ یہ میاں صاحبان سے سعودی عرب اور لندن میں ملاقاتیں بھی کرتے رہے اور میاں نواز شریف اور میاں شہباز شریف کی زیادہ تر تقاریر بھی عرفان صدیقی ہی تحریر کرتے ہیں‘ میاں صاحب نے بدھ کو قومی اسمبلی میں جو تقریر کی‘ یہ بھی عرفان صدیقی صاحب نے تحریر کی تھی‘ یہ میاں صاحب کے اعتباری ساتھی ہیں‘ میجر عامر دین دار گھرانے سے تعلق رکھتے ہیں‘ ان کے والد مولانا طاہر نے اپنے گاؤں پنج پیر میں دارالقرآن کے نام سے مدرسہ قائم کیا‘ یہ مدرسہ اب میجر عامر کے بھائی مولانا طیب چلاتے ہیں‘ طالبان ان کا احترام کرتے ہیں‘ میجر عامر مذاکرات کے ماہر ہیں‘ یہ طالبان کی کمزوریوں سے بھی واقف ہیں چنانچہ یہ ریاست اور طالبان کے درمیان موجود غلط فہمی کی دیوار توڑ سکتے ہیں۔

    رستم شاہ مہمند افغانستان میں پاکستان کے سفیر اور کے پی کے میں چیف سیکریٹری رہے‘ یہ سفارتی باریکیوں کے ساتھ ساتھ ریاستی مجبوریوں سے بھی آگاہ ہیں‘ یہ پشتو اسپیکنگ بھی ہیں‘ یہ طالبان کے غصے کی وجوہات بھی جانتے ہیں اور یہ ملا فضل اللہ کی نفسیات سے بھی آگاہی رکھتے ہیں لہٰذا یہ بھی اہم کردار ادا کر سکتے ہیں‘ اور پیچھے رہ گئے‘ ہمارے دوست رحیم اللہ یوسف زئی۔ یہ ملک کے ایک ایسے صحافی ہیں جو اس پورے خطے کے نفسیاتی‘ سفارتی اور جغرافیائی حالات سے واقف ہیں‘حکومت‘ طالبان اور میڈیا تینوں ان کی عزت کرتے ہیں‘ یہ مذاکرات کے دوران میڈیا کی غلط فہمیاں‘ افواہ سازی اور خیبر پختونخواہ حکومت کی مجبوریاں دور کرسکتے ہیں۔ وزیر داخلہ اور وزیر اعظم بھی اس کمیٹی کا حصہ ہیں‘طالبان سے رابطہ اور مذاکرات یہ کمیٹی کرے گی اور جہاں اختیارات اور فیصلے کی ضرورت پڑے گی وہاں وزیر داخلہ اور وزیر اعظم دونوں موجود ہوں گے چنانچہ موجودہ حالات میں اس سے بہتر کوئی حل ممکن نہیں تھا۔

    میں میاں نواز شریف کو اس فیصلے پر مبارک باد پیش کرتا ہوں لیکن مجھے ساتھ ہی دو خدشات بھی ہیں‘ اللہ نہ کرے آج کل کوئی بڑا خودکش حملہ ہو جائے اور مذاکرات کے دشمن اس حملے کو ان طالبان کے کھاتے میں ڈال دیں جو وزیراعظم کی کمیٹی کو حکومت کی سنجیدہ کوشش قرار دے چکے ہیں یا پھر طالبان کی قیادت پر کوئی ڈرون حملہ ہو جائے‘ خدانخواستہ اگر یہ ہوگیا تو مذاکرات واپس وہاں چلے جائیں گے جہاں حکیم اللہ محسود کی ہلاکت کے بعد چلے گئے تھے‘حکومت اور طالبان اگر دونوں اس حملے سے بچ گئے تو پھر واقعی امن کو موقع مل جائے گا‘ یہ ملک خطرات سے نکل جائے گا ورنہ دوسری صورت میں ہمارے پاس پچھتاوے کے سوا کچھ نہیں بچے گا‘ ہمیں ہوسکتا ہے پھر جنگ کرنی پڑے اور ہم اس جنگ میں کامیاب بھی ہو جائیں مگر اس جنگ کے بعد ہماری وہی حالت ہو گی جو ونسٹن چرچل کی دوسری جنگ عظیم کے بعد تھی‘ چرچل فتح یاب ہو گیا لیکن اس کی باقی زندگی افسوس اور اداسی میں گزری‘ وہ قبریں گنتا گنتا خود بھی قبر میں اتر گیا ۔

    http://www.express.pk/story/222425/

    #107861 0 Likes | Like it now
    pkpolitician
    • Offline
      • Topics:7
      • Replies:98
      • Contributions:105
      • Professional
      • ★★

    مشکل فریضہ

    خاص ہو یا عام، ہر شخص کا ایک مزاج ہوا کرتا ہے۔ وقت کے ساتھ ساتھ اس میں سختی آتی رہتی ہے اور بالآخر آپ اس مقام پر پہنچ جاتے ہیں جہاں اپنے مزاج کے بالکل برعکس کوئی عمل کرنا ممکن ہی نہیں رہتا۔ نواز شریف صاحب کوئی عام آدمی نہیں ہیں۔ 1980ء کی دہائی میں ہمارے سیاسی منظر نامے پر نمودار ہوکربتدریج ہر طرح کی مشکلات کا سامنا کرتے ہوئے مئی 2013ء کے بعد ایک بار پھر اس ملک کے وزیر اعظم منتخب ہوئے۔ عمومی سوچ کے برعکس وہ بڑے گہرے آدمی ہیں۔ طویل اجلاسوں یا تنہائی میں افسروں یا عام لوگوں سے ملاقات ہو تو لب سئے رکھتے ہیں۔ اپنی رائے کا قطعی اور واضح الفاظ میں اظہار نہیں کرتے۔ ان کے ذہن کو سمجھنا ہو تو ضروری ہے کہ ان سوالات کو یاد کرکے ان پر خوب غور کیا جائے جو وہ سرکاری اجلاسوں یا نجی ملاقاتوں میں بڑی سنجیدگی مگر شائستگی کے ساتھ اٹھاتے رہتے ہیں۔ وزیر اعظم کے مزاج کو تھوڑا جاننے کی وجہ سے میں بطور صحافی ان سے ملاقات کا کبھی طلب گار نہیں رہا۔ مجھے خوب علم ہے کہ میں جتنی بھی کوشش کرلوں ان سے ’’خبر‘‘ نام کی کوئی چیز نہیں ملے گی۔ ’’خبر‘‘ چاہیے تو ان لوگوں سے رابطہ کیجیے جو ان دنوں ان سے ملاقاتوں کا شرف حاصل کیا کرتے ہیں۔ ’’خبر‘‘ ان کے پاس بھی نہیں ہوتی۔ مگر وہ آپ کو یہ ضرور سمجھا سکتے ہیں کہ ان دنوں نواز شریف صاحب کو کس نوعیت کے سوالات چند واضح جوابات ڈھونڈنے پر مجبور کررہے ہیں۔

    امن و امان کے حوالے سے ہونے والے ناخوشگوار واقعات میں حال ہی میں نظر آنے والی شدت سے وہ یقینا بہت پریشان ہوئے۔ ان کی پریشانی کا مگر ہرگز یہ مطلب نہیں تھا کہ وہ مسائل پیدا کرنے والوں کے خلاف کسی ’’آپریشن‘‘ کے لیے تیار ہوچکے ہیں۔ بار ہا میں نے اس کالم میں آپ کو یاد دلانے کی کوشش کی ہے کہ اپنی گزشتہ دو حکومتوں کے دوران بھی بظاہر عسکری قیادت سے پوری معاونت کے بعد ان کی حکومت کی جانب سے کچھ ’’آپریشن‘‘ ہوئے تھے۔ ان آپریشنز کے جو اہداف انھیں بتائے گئے تھے یا جنھیں نواز شریف نے اپنے تئیں ’’اہداف‘‘ سمجھا وہ تو حاصل نہ ہوئے مگر ان کے نتیجے میں ان کی حکومتیں ہی فارغ ہوتی رہیں۔

    اپریل 1993ء میں جب ان کی حکومت کو اس وقت کے صدر غلام اسحاق خان نے برطرف کیا تو اصل وجہ وہ اختلافات تھے جو سیاسی حکومت اور عسکری قیادت کے درمیان 1992ء کے وسط میں کیے جانے والے ’’سندھ آپریشن‘‘ کے دوران پیدا ہوکر سنگین تر ہوتے چلے گئے تھے۔ 12اکتوبر 1999ء کی اصل بنیاد ’’کارگل آپریشن‘‘ کی وجہ سے ہونے والی غلط فہمیاں تھیں۔ نواز شریف کا دعویٰ تھا کہ انھیں اعتماد میں لیے بغیرجنرل مشرف کارگل کی پہاڑیوں پر قابض ہوگئے جس کے نتیجے میں پاکستان اور بھارت کے درمیان ایٹمی جنگ بھی ہوسکتی تھی۔ جنرل مشرف آج بھی یہ اصرار کرتے ہیں کہ ’’اوجڑی کیمپ‘‘ میں ہونے والی ایک بریفنگ کے ذریعے انھوں نے وزیر اعظم کو اس آپریشن کے بارے میں پوری طرح اعتماد میں لے کر اس کی منظوری حاصل کرلی تھی۔

    اب میڈیا میں بیٹھے کچھ لوگ جب امن و امان کے حوالے سے ہونے والے ناخوشگوار واقعات کے بعد دہائی مچانا شروع کردیتے ہیں تو نواز شریف صاحب کو اپنی ماضی کی حکومتوں والے ’’آپریشن‘‘ یاد آنا شروع ہوجاتے ہیں۔ اب تو اپنے چند معاونین کو وہ یہ بات بھی یاد دلانا شروع ہوگئے ہیں کہ میڈیا میں لال مسجد کے حوالے سے برپا کیے شوروغوغا کی وجہ سے جنرل مشرف اسلام آباد میں حکومتی رٹ کی بحالی کے لیے ’’کچھ کرنے‘‘ پر مجبور ہوا۔ مگر آپریشن ہوجانے کے بعد پورے میڈیا نے یک زبان ہوکر اسے ’’سیکڑوں یتیم اور بے سہارا مدرسے کی طالبات کا قاتل‘‘ قرار دے دیا۔ سابق صدر آج بھی اس آپریشن کی وجہ سے کئی سنگین مسائل کا سامنا کررہے ہیں۔

    وزیر اعظم کی سوچ اور تحفظات کی تھوڑی بہت خبر رکھنے کی وجہ سے مجھے پورا یقین تھا کہ بدھ کو وہ جب قومی اسمبلی میں تشریف لائیں گے تو کسی ’’آپریشن‘‘ کا اعلان ہرگز نہیں کریں گے۔ میں بالآخر درست ثابت ہونے پر نہ تو مغرور ہوں نہ مسرور۔ طالبان سے مذاکرات کے لیے انھوں نے جو چار رکنی کمیٹی بنائی ہے‘ اس کے ارکان میجر ریٹائرڈ عامر، عرفان صدیقی، رحیم اللہ یوسف زئی اور رستم شاہ مہمند اپنی جگہ بہت مناسب لوگ ہیں۔ ان کو مگرجو فریضہ سونپا گیا ہے وہ بہت مشکل ہے۔ اپنے تمام تر تحفظات کے باوجود اگرچہ میرے پاس خیر کی امید رکھنے کے سوا کوئی راستہ بھی موجود نہیں۔ سو، آئیے ہاتھ اٹھائیں دُعا کے لیے۔

    نواز شریف صاحب کی سوچی سمجھی مگر بظاہر ہچکچاہٹ پر مبنی حکمت عملی کے ساتھ ہی ساتھ ہمیں ان ٹھوس امور کو بھی ذہن میں رکھنا ہوگا جو کارروائی کے حوالے سے ہماری عسکری قیادت کے ہاتھ باندھے ہوئے ہیں۔ Goodاور Badطالبان کا مخمصہ باقی نہ بھی رہے تو سوال یہ بھی کیا جاتا ہے کہ وہ کون سا ملک ہے جہاں قانون نافذ کرنے والے اداروں کو ’’خصوصی قوانین‘‘ کے ذریعے پوری طرح بااختیار بنائے بغیر امن و امان بحال کرنے کے لیے میدانِ میں اُتارا گیا۔ پاکستان میں کوئی بڑا آپریشن ہوا تو اس میں Collateral Damageبھی ہوگا۔ کئی بے گناہ شہری گیہوں کے ساتھ پس جائیں گے۔ ہمارا ’’بے باک میڈیا‘‘ اس کے بارے میں سیاپا فروشی کرنے سے باز نہیں آئے گا۔ پھر ’’آزاد عدلیہ‘‘ ہے جہاں Missing Personsکی دہائی مچائی جائے گی۔ اسی لیے تو بڑی عجلت میں ’’تحفظ پاکستان آرڈیننس‘‘ بنایا گیا تھا۔ وہ جب قومی اسمبلی اور سینیٹ کے لوگوں کے سامنے آیا تو بھانت بھانت کی آوازیں اٹھنا شروع ہوگئیں۔ زاہد حامد اب دن رات بیٹھے اس قانون کے لیے ایسی ترکیبیں اور اصطلاحات ڈھونڈ رہے ہیں جو Draconian سنائی نہ دیں۔ جب تک وہ ایک تازہ مسودہ تیار کرنے کے بعد اسے باقاعدہ قانون کی صورت منظور نہیں کروا لیتے کوئی کارروائی نہیں ہوگی۔ ہاں ایک بات طے ہے کہ اگر ناخوشگوار واقعات دوبارہ ہوئے تو فوراَ ’’جوابی کارروائی‘‘ ہوا کرے گی۔ فی الحال اس کے علاوہ ریاستِ پاکستان کی سیاسی اور عسکری قیادت مسائل پیدا کرنے والے واقعات کے خلاف اور کچھ کرنے کو بالکل تیار نہیں۔

    http://www.express.pk/story/222435/

    #107862 0 Likes | Like it now
    Participant
    Participant
    مومن
    • Offline
      • Topics:934
      • Replies:5621
      • Contributions:6555
      • Expert
      • ★★★

    #107863 0 Likes | Like it now
    Participant
    Participant
    مومن
    • Offline
      • Topics:934
      • Replies:5621
      • Contributions:6555
      • Expert
      • ★★★

    #107864 0 Likes | Like it now
    Participant
    Participant
    مومن
    • Offline
      • Topics:934
      • Replies:5621
      • Contributions:6555
      • Expert
      • ★★★
    #107865 0 Likes | Like it now
    Participant
    Participant
    مومن
    • Offline
      • Topics:934
      • Replies:5621
      • Contributions:6555
      • Expert
      • ★★★
    #107866 0 Likes | Like it now
    Participant
    Participant
    مومن
    • Offline
      • Topics:934
      • Replies:5621
      • Contributions:6555
      • Expert
      • ★★★

    #107867 0 Likes | Like it now
    Participant
    Participant
    مومن
    • Offline
      • Topics:934
      • Replies:5621
      • Contributions:6555
      • Expert
      • ★★★

    #107868 0 Likes | Like it now
    Participant
    Participant
    مومن
    • Offline
      • Topics:934
      • Replies:5621
      • Contributions:6555
      • Expert
      • ★★★

    #107869 0 Likes | Like it now
    Bawa
    • Offline
      • Topics:441
      • Replies:5095
      • Contributions:5536
      • Expert
      • ★★★

    .

    .

    .

    کیا طالبان واقعی امام کعبہ کو نقصان پہنچا سکتے ہیں؟

    #107870 0 Likes | Like it now
    Bawa
    • Offline
      • Topics:441
      • Replies:5095
      • Contributions:5536
      • Expert
      • ★★★

    #107871 0 Likes | Like it now
    Bawa
    • Offline
      • Topics:441
      • Replies:5095
      • Contributions:5536
      • Expert
      • ★★★

    #107872 0 Likes | Like it now
    Participant
    Participant
    مومن
    • Offline
      • Topics:934
      • Replies:5621
      • Contributions:6555
      • Expert
      • ★★★

    #107873 0 Likes | Like it now
    Participant
    Participant
    مومن
    • Offline
      • Topics:934
      • Replies:5621
      • Contributions:6555
      • Expert
      • ★★★

Viewing 30 replies - 61 through 90 (of 241 total)

You must be logged in to reply to this topic.